پیر حمید الدین سیلاوی نے مسلم لیگ نون سے قطع تعلق کر لیا

لاہور:پنجاب کے وزیر قانون رانا ثنا اللہ کے مستعفی نہ ہونے نیز احمدیوں کی حمایت میں ان کے بیان پر اپنا موقف واضح کرنے کے لیے حکومت پنجاب کو تسلسل سے تین بار مہلت دینے کے باجود کوئی جواب نہ ملنے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے آستانہ عالیہ سیال شریف کے پیر حمید الدین سیالوی نے پاکستان مسلم لیگ سے ناطہ توڑ لیا ۔اس کے ساتھ ہی پیر سیالوی نے اپنا سیاسی اثر و رسوخ استعمال کرنے کی دھمکی دی ہے۔پیر حمید الدین سیالوی کا کہنا ہے کہ دس دسمبر کو فیصل آباد کے جلسے میں پندرہ اراکین پارلیمنٹ احتجاجی طور پر اپنے استعفے پیش کریں گے۔ انہوں نے حکومت کو خبردار کرتے ہوئے کہا: فیصل آباد کے دھوبی گھاٹ پر ہونے والے جلسہ میں ان استعفوں کا اعلان حکومت کے خلاف تحریک کا آغاز ہوگا۔ پیر سیالوی نے پنجاب حکومت کو متنبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ مذہبی اقلیت کی حمایت میں دیے گئے بیان پر فی الفور رانا ثنا اللہ کو عہدے سے برخاست کیا جائے۔ پیر حمید الدین سیالوی نے مزاروں سے منسلک سیاسی شخصیات کو ہدایت کی ہے کہ وہ آئندہ انتخابات میں مسلم لیگ ن کے خلاف حصہ لیں۔ قومی اسمبلی کے رکن صاحبزادہ غلام نظام الدین سیالوی کے مطابق آستانہ عالیہ سیال شریف کو گلورا شریف، تونسہ شریف ۔پاک پٹن، موہرا شریف اور سلطان باہو سمیت36دیگر روحانی مراکز کی حمایت حاصل ہے۔واضح رہے کہ پنجاب کے وزیر اعلیٰ میاں محمد شہباز شریف اور پیر حمید الدین کے درمیان طے پانے والے معاہدے کے تحت شہباز شریف نے یقین دہانی کروائی تھی کہ وہ خود دربار سیال شریف حاضر ہو کر رانا ثنا اللہ کے معاملے پر موقف واضح کریں گے۔ تاہم ابھی تک وہ ایسا کرنے میں ناکام رہے ہیں۔

Title: sial sharif parts ways with pml n | In Category: پاکستان  ( pakistan )